وفاقی وزیر تجارت و سرمایہ کاری سید نوید قمر نے زور دیا ہے کہ پاکستان عالمی گرین ہاؤس گیسوں میں1 فیصد سے بھی کم حصہ ڈالنے کے باوجود موسمیاتی بحران کے اولین درجے پر ہے، ملک شدید موسمی واقعات جیسے خشک سالی، جنگلات کی آگ، شدید گرمی کی لہروں اور تباہ کن سیلابوں سے دوچار ہے۔

وفاقی وزیر تجارت و سرمایہ کاری سید نوید قمر نے برسلز میں یورپی پارلیمنٹ کی کمیٹی برائے ماحولیات، صحت عامہ اور فوڈ سیفٹی سے خطاب کیا۔

وزیر تجارت کے ساتھ بیلجیئم، لکسمبرگ اور یورپی یونین میں پاکستان کے سفیر ڈاکٹر اسد مجید خان بھی موجود تھے۔

یہ تیسرا مباحثہ تھا جو یورپی پارلیمنٹ کی جانب سے پاکستان میں تباہ کن موسمیاتی سیلاب کے حوالے سے منعقد کیا گیا جو کہ بے مثال تھی۔

وزیر تجارت کے خطاب کے بعد مختلف سیاسی گروپوں سے تعلق رکھنے والے ممبران یورپی پارلیمنٹ (MEPs) کے ساتھ تبادلہ خیال ہوا۔

وزیر تجارت نے چیئر ایم ای پی پاسکل کینفن اور کمیٹی کے ارکان کا انہیں یورپی یونین کی پارلیمنٹ کی باوقار کمیٹی سے خطاب کے لیے مدعو کرنے پر شکریہ ادا کیا اور پاکستان اور یورپی یونین کے درمیان پارلیمانی تبادلوں کی اہمیت پر زور دیا۔

اس موقع پر وفاقی وزیر نے اشارہ کیا کہ پاکستان نے موسمیاتی تبدیلیوں کے منفی اثرات سے نمٹنے کے لیے متعدد اقدامات کیے ہیں تاہم موجودہ آفت کا حجم اور پیمانہ ہماری قومی صلاحیت سے باہر ہے اور پائیدار ترقی کے اہداف پر ہماری پیشرفت کو بری طرح متاثر کر رہا ہے۔

وزیر تجارت نے اشارہ کیا کہ ملک دوستوں اور شراکت داروں کی حمایت اور تعاون کے ساتھ بہتر واپسی کے لیے پرعزم ہیں۔

نوید قمر نے اس بات پر زور دیا کہ مسلسل ترجیحی منڈی تک رسائی پاکستان کی معاشی بحالی، ترقی اور ترقی کے مقاصد کے حصول میں مدد کرنے میں اہم کردار ادا کرے گی، خاص طور پر تباہی کے بعد۔

انہوں نے اس بات پر بھی زور دیا کہ جاری ہونے والے نقصانات اور ان نقصانات کی بحث کو کثیرالجہتی فورمز پر انوائرمنٹ سے متعلق تمام بات چیت میں آگے لایا جانا چاہیے جس میں اقوام متحدہ کی آئندہ ہونے والی موسمیاتی تبدیلی کانفرنس COP 27 بھی شامل ہے۔

81 رکنی ENVI کمیٹی یورپی پارلیمنٹ کی سب سے نمایاں اور بااثر کمیٹیوں میں سے ایک ہے۔ یہ ماحولیاتی پالیسی اور ماحولیاتی تحفظ کے اقدامات، صحت عامہ، اور خوراک کی حفاظت کے مسائل کی نگرانی اور رہنمائی فراہم کرتا ہے۔

یورپین پارلیمنٹ کی ڈویلپمنٹ کمیٹی کے چیئرمین ایم ای پی ٹامس ٹوبے کے ساتھ ایک الگ ملاقات میں وفاقی وزیر نے پاک-یورپی یونین کے ترقیاتی تعاون کو وسعت دینے اور سیلاب سے متاثرہ علاقوں کی بحالی اور تعمیر نو کے لیے یورپی یونین کی گلوبل گیٹ وے حکمت عملی کو استعمال کرنے میں پاکستان کی دلچسپی پر زور دیا۔ 



Leave a Reply

Your email address will not be published.