امریکی دفترِ خارجہ—فائل فوٹو

امریکی وزارتِ خارجہ کا کہنا ہے کہ امریکا پُر اعتماد ہے کہ پاکستان اپنے ایٹمی ہتھیاروں کی حفاظت کر سکتا ہے۔

یہ بات امریکی وزارتِ خارجہ کی جانب سے جاری کیے گئے اعلامیے میں کہی گئی ہے۔

امریکی وزارتِ خارجہ کے اعلامیے میں کہا گیا ہے کہ امریکا کو اعتماد ہے کہ پاکستان اپنے ایٹمی اثاثوں کو محفوظ رکھنے کی صلاحیت رکھتا ہے۔

اعلامیے میں امریکی وزارتِ خارجہ نے مزید کہا ہے کہ امریکا نے ہمیشہ ایک محفوظ اور خوش حال پاکستان کو امریکی مفادات کے لیے اہم سمجھا ہے۔

امریکی وزارتِ خارجہ کا اپنے اعلامیے میں یہ بھی کہنا ہے کہ امریکا پاکستان کے ساتھ طویل مدتی تعاون کی قدر کرتا ہے۔

واضح رہے کہ یہ بیان امریکی صدر جو بائیڈن کے پاکستان کے حوالے سے دیے گئے متنازع بیان کے بعد سامنے آیا ہے۔

امریکی صدر جو بائیڈن نے پاکستان کے ایٹمی پروگرام کو بے قاعدہ قرار دیا تھا۔

انہوں نے ڈیمو کریٹک کانگریشنل کمپین کمیٹی میں خطاب کے دوران روس اور چین کا حوالہ دیتے ہوئے پاکستان کو لپیٹ میں لے لیا۔

امریکی صدر جو بائیڈن نے پاکستان پر الزام لگاتے ہوئے کہا تھا کہ پاکستان کا ایٹمی پروگرام بے قاعدہ ہے۔

جو بائیڈن کا یہ بھی کہنا تھا کہ میرا خیال ہے کہ پاکستان خطرناک ترین ممالک میں سے ایک ہے۔

امریکی صدر کے بیان پر پاکستان کی جانب سے شدید ردِ عمل کا اظہار کرتے ہوئے اسلام آباد میں امریکی سفیر ڈونلڈ بلوم کو دفترِ خارجہ طلب کر کے احتجاجی مراسلہ دیا گیا تھا۔

سفارتی ذرائع کے مطابق امریکی سفیر سے مراسلے کے ذریعے امریکی صدر کے بیان پر وضاحت کا بھی کہا گیا جبکہ امریکی سفیر کو پاکستان کے مؤقف سے آگاہ کیا گیا تھا۔

وزیرِ اعظم شہباز شریف نے جوہری ہتھیاروں سے متعلق امریکی صدر جو بائیڈن کے بیان کو حقائق کے برعکس اور گمراہ کن قرار دیتے ہوئے مسترد کر دیا تھا۔

انہوں نے کہا تھا کہ پاکستان کا جوہری پروگرام مؤثر، تکنیکی اور فول پروف کمانڈ اینڈ کنٹرول سسٹم کے زیرِ انتظام ہے۔

وزیرِ اعظم شہباز شریف نے یہ بھی کہا تھا کہ عالمی امن کو اصل خطرہ عالمی مروجہ اقدار کو پامال کرنے والی بعض ریاستوں، انتہا پسند قومیت پسندی، غیر قانونی قبضوں کے خلاف جدوجہد کرنے والوں کے انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں سے ہے۔



Leave a Reply

Your email address will not be published.