ایف آئی اے کی جانب سے حامد زمان کے ریمانڈ کی استدعا مسترد کرتے ہوئے انہیں جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بھیج دیا گیا۔

وفاقی تحقیقاتی ادارے (ایف آئی اے) نے ممنوعہ فنڈنگ کیس میں گرفتار پی ٹی آئی رہنما حامد زمان کا 12 روزہ مزید جسمانی ریمانڈ مانگا تھا۔

پاکستان تحریک انصاف کے خلاف ممنوعہ فنڈنگ کیس میں ایف آئی اے نے پی ٹی آئی کے بانی رہنما حامد زمان کو دو روزہ جسمانی ریمانڈ مکمل ہونے کے بعد ضلع کچہری میں پیش کیا۔

مجسٹریٹ نے ایف آئی اے کی جانب سے ریمانڈ کی درخواست پر فیصلہ محفوظ کر لیا۔

ایف آئی اے نے کہا کہ اہم سراغ ملے ہیں جن کی روشنی میں مزید تفتیش کرنا ہے، ہم نے ای میل آئی ڈی چیک کرانے ہیں۔

جوڈیشل مجسٹریٹ نے سوال کیا کہ یہ مان رہے ہیں کہ پیسے انصاف فنڈ میں گئے ہیں۔

ایف آئی اے نے کہا کہ اگر یہ مان لیتے ہیں تو کیس ہی ثابت ہو جاتا ہے۔

حامد زمان کے وکیل نے کہا کہ تفتیش کے لیے جسمانی ریمانڈ کی کیا ضرورت ہے، گرفتاری کے بعد عدالت نے دیکھنا ہے کہ تفتیش میں کیا پراگریس ہوئی ہے۔

وکیل کا کہنا ہے کہ تفتیشی ادارے کو مزید ریمانڈ کے لیے وجوہات بتانا ہوتی ہیں، اگر پچھلے ریمانڈ میں تفتیش نہیں ہوئی تو عدالت مزید ریمانڈ سے انکار کر سکتی ہے۔

مجسٹریٹ نے ایف آئی اے کی جانب سے ریمانڈ کی درخواست پر فیصلہ محفوظ کر لیا۔



Leave a Reply

Your email address will not be published.